سیاسی ملاؤوں پر یہی میری رائے ہے کل جس کے لیے اتنی مغز ماری کی تھی

0
26

اوریا مقبول جان کی گفتگو کے یہ حصے ملاحظہ کریں۔

سیاسی ملاؤوں پر یہی میری رائے ہے کل جس کے لیے اتنی مغز ماری کی تھی ۔۔۔ 

——————————–

” مجھے کسی سیاسی پارٹی سے کوئی گلا نہیں کیونکہ وہ تو سود کے خلاف مہم کا حصہ نہیں ، وہ جو چاہیں کریں ، لیکن آپ اللہ اور اس کے رسول کی دعوت لے کر اٹھے ہو ، میں آپ پر سوال کروں گا کیونکہ آپ کے غلط فعل سے لوگ دین سے متنفر ہوتے ۔ آپ کی حرکتوں کی وجہ سے اسلام کو گالی پڑتی ہے”

” کیا آپ نے مولانا فضل الرحمان سے اتحاد سے پہلے سوال کیا اس کے تمام وزراء بلوچستان میں وہی کچھ تیس سال سے کر رہے ہیں جو زرداری اور نواز شریف کرتے ہیں۔انہوں نے ایک سطر اسلامی قانون کی منظور کروائی ہو ؟؟؟”

جمعیت کا مسلسل وزیر خزانہ بلوچستان میں رہا مولانا عصمت اللہ، سرحد میں سراج الحق صاحب ، نے کیا کیا سود کے متعلق ؟؟؟

۔میں جب ڈپٹی سیکرٹری فنانس تھا تجویز دی تھی کہ ایک حکم نامہ جاری کریں کہ سرکاری سرمایہ روزانہ کی بنیاد پر نکال کر سرکاری ٹریژری میں رکھا جائے جو انگریز کے زمانے سے ہر ڈسٹرکٹ میں گارڈ سمیت موجود ہے لیکن سب چپ رہے ، اب کس منہ سے سود کے خلاف باتیں کرتے ہو؟ کالم میں لکھ کر مشورہ دیا کہ خدا کیلئے وزارت خزانہ نہ لینا آپ براہ راست سودی معاملات میں ملوث ہو جاؤ گے لیکن سراج الق صاحب ایک نہ سنی ۔اپنے اعمال پر الللہ کو خود جواب دیں گے”

“آپ میں اور دیگر مغربی جمہوری پارٹیوں میں کوئی فرق نہیں رہ گیا ہے وہ طاغوت ہیں آپ ان کے اتحادی ۔ اللہ مجھے معاف کرئے اگر میں نے غلط بات کی ہو
یہاں اوریا صاحب نے ایک خبر کا امیج اپلوڈ کیا جس میں مولانا فضل الرحمٰن صاحب کا بیان تھا کہ ہمارے مقابلے پر امیدوار کھڑے کرنا گناہ ہے۔اس پر یہ کہا
: یہ کس آیت اور حدیث کے مطابق فتوی ہے ۔ ابھی بھی وقت ہے ان منافقوں سے جماعت اسلامی علیحدہ ہو جائے ورنہ ختم ہو جئے گی”

” آپ کو اللہ نے خالص دین پہنچانے کہ ذمہ داری سونپی ہے ۔ انقلاب لانا نہ آپ کی ذمہ داری تھی نہ کسی رسول کی ۔ آپ پیغام درست اور صاف صاف پہنچائیں چاہے کوئی بھی ناراض ہو ۔اس ہارنے میں بھی عظمت ہو گی”

” میں زرداری نواز شریف اور مولانا فضل الرحمان کو ایک جیسا مجرم سمجھتا ہوں
ان کے جرم نہیں چھپا سکتا۔ جمہوریت کو کفر مولانا مودودی بھی کہتے تھے”

” کیا رسول اکرم اور صحابہ الیکشن لڑتے تھے ، وہ تو بند گلی میں نہیں آئے”

” میں نے کل منصورہ مسجد میں ظہر کی نماز پڑھی ، ہر کوئی میرے پاس آکر گلہ کررہا تھا اور مسجد میں کہہ رہا تھا کہ آپ سمجھائیں انہوں نے کیوں فضل الرحمان جیسے منافق سے اتحاد کیا ہے”

.
“اللہ مولانا فضل الرحمان کی صحبت میں جماعت پر رحم کرے ، جتنا نقصان دین کو اس شخص کی سیاست نے پہنچایا ہے کسی سیکولر نے بھی نہیں پہنچایا ، عام لوگ اس کی وجہ سے دین اور مولوی سے متنفر ہوئے”

” میں نے چوبیس سال بلوچستان میں جمعیت کے وزیروں کی ساتھ گذارے ہیں ۔ میں کبھی ذکر نہیں کرتا کہ اسلام بدنام ہوگا ، یہ لوگ زرداری اور نواز شریف سے زیادہ نہیں تو اتنے کرپٹ اور بد دیانت ضرور ہیں ۔ فضل الرحمان نے تو جب میں سبّی میں تھا ایک سرکاری کول مائن الاٹ کروا رکھی تھی اور وہ جس کام کی رشوت میں ملی تھی میں جانتا ہوں”

” مولانا صاحب نے ایک شخص کو زرداری سے ماربل کے امپورٹ کا پرمٹ لے کر دیا تھا جو غیر قانونی تھی ۔ میں چاغی میں ڈی سی تھا میں نےاجازت نہیں دی وہ روتے ہوئے بولا فضل الرحمان سے میرے پچیس لاکھ واپس کروائیں جو اس نے رشوت میں لئے ہیں”

” آپ اس منافق کو دین کے نام پر اپنے دیو بندی سمیع الحق کے ساتھ اکٹھا کراودیں میں آپکی بیعت کرلوںگا۔ سیاست اور جمہوریت ہی اس کا دین ہے”

” ستر کے ایکشن میں ان کے والد اور مولانا غلام غوث ہزاروی ،مولانا مودودی کو سٹیج پر گالیاں دیتے تھے”

“پاکستان میں سب سے پہلے جو شخص بکا تھا وہ مفتی محمود تھا ، ایوب خان کو ترمیم کیلئے دو ووٹوں کی ضرورت تھی ایک مفتی محمود اور دوسرے جسٹس افضل چیمہ ۲۵ ہزار فی ووٹ پر بکے تھے”

اللہ آپ لوگوں کو اپنی انجمن میں خوش رکھے ۔ میں جو حق سمجھا کہہ دیا ۔ آپ سیاست کریں ، آپ کو یہ میدان مبارک ، اللہ حافظ

زوہیب زیبی صاحب کی تحریر کے اقتباسات،

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here