دنیا بھر میں القائدہ مختلف ناموں سے عالم اسلام کے خلاف حالت جنگ میں ہے ۔

0
98
Sharing Services
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

القائدہ اب ایک تنظیم نہیں رہی ۔ یہ ایک نظریے اور سوچ کا نام ہے ۔ جس کے تحت تمام اسلامی ملکوں کے خلاف انکا اعلان جہاد ہے ۔ دنیا بھر میں القائدہ مختلف ناموں سے عالم اسلام کے خلاف حالت جنگ میں ہے ۔
انکے حامی انکے خلاف کوئی دلیل ماننے کو تیار نہیں ۔ وہ ہر بات کی تاویل کر لیتے ہیں ۔ یوں لگتا ہے گویا ان کی عقلوں پر پتھر پڑ چکے ہیں اور دلوں پر مہر لگ چکی ہے اور اب انکو کچھ سنائی اور دکھائی نہیں دیتا ۔

القاعدہ کی کاروائیاں اور ان میں پنہا امریکی مفادات سے قطع نظر انکے آئے دن انکے جو بیانات یا اعلانات آتے ہیں یہ ان میں سے کچھ کی لسٹ ہے ۔ حضور(ص) فرماتے ہیں مؤمن کی بصیرت سا ڈرو وہ اللہ کے نور سے دیکھتا ھے ۔ دیکھیں آپکی بصیرت کیا کہتی ہے!!!
ملاحظہ کیجیے !!!

“دنیا میں کوئی ملک اسلامی ملک نہیں بشمول سعودی عرب اور پاکستان کے ۔ انکو درست کرنے کے لیے انکے خلاف اعلان جہاد ہے اور اس جہاد کے لیے کہیں سے بھی امداد لی جا سکتی ہے جیسے انڈیا(مشرکین)سے پاکستان کے خلاف امریکہ و اسرائیل (یہود و نصاری) سے شام اور لیبیا کے خلاف ۔ یہ امداد لینا حضور(ص) سے ثابت ہے ۔” ( یہ القاعدہ کی تمام شاخوں کا مشترکہ نظریہ ہے )

خانہ کعبہ اب بت کدہ بن چکا ہے اس کو ڈھا دینگے ( داعش )

شام و عراق میں موجود تمام صحابہ کی قبروں کہ اکھاڑ لینگے ( داعش)

اسرائیل سے پہلے عراق کے خلاف جہاد ضروری ہے (داعش)

شام کے خلاف جہاد کے لیے امریکی امداد قبول ہے (فری سیرین آرمی)

احکام اسلامہ کی حکومت نے صومالیہ میں جو اسلامی نظام نافذ کیا وہ ہمارے حساب سے درست نہیں ۔ اسلئے انکے خلاف اعلان جہاد ہے ( الشباب )

دوران جہاد بغیر نکاح عورت حلال ہے ( تیونس اور شام کی القاعدہ )

سعودی عرب پر کافروں کا قبضہ ہے جن سے چھڑانے کے لیے ان پر حملے کر رہے ہیں ( یمنی القاعدہ )

لیبیا میں معمر قضافی کے خلاف امریکی امداد لینا جائز ہے ( القاعدہ لیبیا )

پاکستان کی چین سے دوستی جائز نہیں ( ترکستان اسلامک مومنٹ اور ٹی ٹی پی)

فلسطین میں اہل تشیع کی اکثریت ہے ان کے اسرائیل کے ہاتھوں مرنے پر جہاد فرض نہیں ہوتا ( تقریباً تمام القاعدہ )

افغانستان سے پہلے پاکستان میں جہاد ضروری ہے ( ٹی ٹی پی )

کشمیر میں جہاد کرنا جائز نہیں ( ٹی ٹی پی)

کشمیر میں انڈئن فورسز پر حملے حرام ہیں اور انکو پتھر مارنا جائز نہیں ( علمائے دیوبند جو ٹی ٹی پی کی سرپرستی کرتے ہیں )

انڈیا میں خودکش حملے حرام ہیں اور پاکستان میں حلال ہیں ( انڈیا اور پاکستان کے علمائے دیوبند )

نریندر مودی حکومت کی اطاعت واجب ہے ( انڈین علمائے دیوبند )

پاکستانی حکومت کے خلاف خروج فرض ہے ( پاکستان کے علمائے دیو بند )

آئی ایس آئی یا پاکستانی حکومت کے زیر سرپرستی جہاد درست نہیں ( ٹی ٹی پی)

پاکستان کا دفاع کرنا وطن پرستی ہے اور جائز نہیں ( ٹی ٹی پی اور انکے حامی )

غزوہ ہند دراصل پاکستان کے خلاف ہے اور اس کے لیے ہندوستان سے امداد لی جا سکتی ہے ( ٹی ٹی پی )

اسلام نافذ کرنے کے لیے تمام مسلمانوں کو ذبح کرنا پڑے تو پیچھے نہیں ہٹیں گے ( ٹی ٹی پی)

فرار کے لیے عورت کا بھیس بدلنا یا برقعہ پہننا جائز ہے ( مولانا عبدالعزیز پاکستان میں القاعدہ کی سوچ کو پروان چڑھانے والا )

امریکہ کتا بھی مارے تو وہ شہید ہے ( مولانا فضل الرحمن ٹی ٹی پی کا حامی )

قاضی حسین احمد کافر ہو چکا ہے اور اب واجب القتل ہے ( ٹی ٹی پی / ایک دو خودکش بھی کیے گئے مرحوم پر )

ہمارے حق پر ہونے کی سب سے بڑی دلیل یہ ہے کہ ہمارا جھنڈا کالا ہے ( ٹی ٹی پی / یاد رہے ملا عمر صاحب اور اسکے تشکیل میں لڑنے والوں کے جھنڈے بھی کالے ہی ہیں جن سے انکی خونریز جنگیں چل رہی ہیں )

یہ ان نظریات اور اعلانات میں سے کچھ ہیں جو آئے دن سننے میں آتے ہیں اور جنکا فیس بک وغیرہ پر انکے حامی بھرپور دفاع کرتے رہتے ہیں ۔ یہ سارے آپکی نظروں سے پہلے گزر چکے ہونگے ۔ ذرا ان کو دل کی آنکھوں سے پڑھیے کیا یہ واقعی حق ہے ؟؟؟ !!!!!!

تحریر شاہد خان


Sharing Services
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here