جمہوریت کے نام پہ خود کو بلیک میل نہ ہونے دیں۔۔۔۔۔ خود کو پہچانیں ۔۔اپنی قدر کریں ۔۔۔اپنی خودی برقرار رکھیں ۔۔۔یہ ہی زندہ قوموں کا طریقہ ہے یہی جمہوریت کی پہچان

0
180

تحریر: جویریہ شفاعت
______________

کل یونہی ایک ویڈیو نظر سے گزری ۔۔۔۔جس میں ایک کارکن نواز صیب کو “سیلوٹ ” کرنے کی کوشش میں ہلکان ہوتا نظر آیا مزید ستم یہ کے اسکی تواضع بالکل “جمہوری طریقے “سے کی گی۔۔۔۔آپ اس ویڈیو میں نواز صیب کے تاثرات بخوبی ملاحظہ کر سکتے ہیں ۔۔۔۔جو ہر تکلیف۔۔رنج ۔۔اور افسوس سے خالی ہیں ۔۔۔۔جیسے ان کے لیے یہ معمول کی بات ہو۔۔۔۔ایک معمولی شخص کی یہ جرات بھی کیسے کے وہ اسکے قریب آۓ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!!۔

سب سے قابل رحم بات یہ ہے کے جمہوری اس کا بھی دفاع کرتے نظر آۓ ۔۔۔۔۔۔ افسوس انہوں نے اپنی عزت نفس ان کے پاس گروی رکھ دی۔۔۔۔ جیسا چاہے سلوک کریں ۔۔روندیں یا کچل ڈالیں ۔۔۔اف تک نہیں کی جاتی۔۔۔۔ اپنے لیڈروں کی غلط اقدام ۔۔۔۔ کرپشن ۔۔۔ اور جھوٹ کو چھپانے میں یہ جمہوری اپنا ثانی نہیں رکھتے۔۔۔۔۔ !!!۔

اکثر لاکھوں کے بنے اسٹیج پہ مہنگے ترین لباس ۔۔اور دیگر لوازمات پہنے کھڑے تقریر کرتے سیاستدان ۔۔۔۔اور اسٹیج سے گہرائ میں کھڑے زبوں حال ۔۔۔ٹوٹی چپل ۔۔۔ملگجا لباس پہنے۔۔۔پسینے میں شرابور عوام ۔۔پل بھر میں ۔۔ماضی اور حال کی کارکردگی کا سفر طے کرواتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ جبکہ مستقبل کا نقشہ بھی خوب واضح کرتے ہیں ۔۔۔۔۔ مگر عوام اپنی ہی حالت سے بے خبر اپنے لیڈروں کے حق میں اچھل اچھل کر نعرے لگاتے انتہائ قابل رحم معلوم ہوتے ہیں ۔۔۔۔!!!۔

جمہوری نعرہ ووٹ کو عزت دو کے نعرے سے اپنی بچی کچی عزت برقرار رکھنے کی کوشش میں مبتلا سیاستدان ووٹر کے حقوق کو یکسر فراموش کیے ہوۓ ہیں ،۔۔، افسوس تو جمہوریوں پہ ہے کے یہ سمجھنے کو تیار بھی نہیں کے یہ سیاستدان ہمارے حقوق کے تحفظ کے لیے منتخب کیے جاتے ہیں نہ کے اپنے اقتدار کو مضبوط کرنے کے لیے ۔۔۔بنیادی حقوق کے تحفظ سے لیکر خارجہ پالیسی تک انکی “کارکردگی ” کسی وضاحت کی محتاج نہیں۔۔۔۔۔ کلبھوشن کا معاملہ ہو یا مسئلہ کشمیر ۔۔۔۔ ان کی گہری طویل خاموشی کی نذر ہو جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ دہشتگردی کے خلاف پاکستان کی کوششیںوں کو سراہنے کے بجاۓ اپنے اقتدار کے حصول کے لیے ناقابل تلافی نقصان پہنچانا انکی “حب الوطنی” کی “زندہ” مثال ہے ۔۔۔۔خیر چھوڑیں یہ بڑے بڑے مسائل محدود زہنوں میں نہیں سما سکتے ہمارا مسئلہ تو بجلی۔۔۔گیس۔۔۔۔مہنگائ ۔۔۔تعلیم ۔۔روزگار۔۔صحت ۔۔۔ہےیعنی دو وقت کی روٹی رہنے کو چھوٹا سا مکان جہاں بچوں کو اپنی خواہشات کے لیے ترسنا نہ پڑے ۔۔جہاں ڈینگی اور ملیریا سے بچاو ہو سکے ۔۔۔۔ انتہائ اہم آپریشن کے لیے ہفتوں انتظار نہ کرنا پڑے۔۔۔۔۔تعلیم کے حصول کے لیے روزآنہ کی آمدن کو بار بار گننا نہ پڑے۔۔۔۔جہاں کھانا پکاتے گیس اچانک چلی جانے کی صورت میں بھوکا اسکول اور دفتر نہ جانا پڑے۔۔۔جہاں شدید گرمی اور ہوا بند ہونے کے باوجود بد ترین لوڈ شیڈنگ کے باعث اپنے پیاروں کے جنازے نہ اٹھانے پڑیں ۔۔۔۔۔۔مگر افسوس جمہوری سیاستدان یہ بنیادی ضروریات دینے سے بھی قاصر ہیں ۔۔۔۔ان کے نزدیک عوام کی زندگی اور عزت کوئ معنی نہیں رکھتی۔۔۔۔۔۔۔۔ عزت نفس اور خود داری تو برسوں بیتے اس جمہوریت کے سیلاب میں بہہ نکلے۔۔۔۔۔زکوٰة …اور خیرات کی لمبی لمبی لائنوں میں لگے یہ عوام اپنی خودداری اور عزت نفس کے جنازے کو کندھا دینے کے قابل بھی نہیں رہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ !!!!!۔

ہمیں آمریت ،، جمہوریت اور بادشاہت سے سروکار نہیں ہمیں تو اپنا حق چاہییے جو ایک ریاست دیتی ہے ۔۔۔۔ہم دس سال سے “جمہوری لالی پاپ ” چباتے اکتا چکے ہیں ۔۔۔۔ ہماری عزت نفس کی دھجیاں تو اڑا ہی چکے خدادا جینے کا حق تو دیں ۔۔۔۔۔۔خدا اس قوم کی حالت نہیں بدلتا جسے خود اپنی حالت بدلنے کا خیال نہ ہو۔۔۔۔۔۔ بار بار کے آزماۓ لوگوں کو مزید آزما کر خود پہ زندگی تنگ کرنا۔۔۔۔۔اپنی نسلوں کا سودا کرنا ۔۔۔۔ پنکھا جھلتے ہوۓ نعرے لگانا کہاں کی عقلمندی ۔۔۔۔۔۔!!!!۔

غلامانہ زہنیت کو ترک کریں ۔۔۔۔۔ سچ پہ جھوٹ کا پردہ نہ ڈالیں ۔۔۔۔۔ جمہوریت کے نام پہ خود کو بلیک میل نہ ہونے دیں۔۔۔۔۔ خود کو پہچانیں ۔۔اپنی قدر کریں ۔۔۔اپنی خودی برقرار رکھیں ۔۔۔یہ ہی زندہ قوموں کا طریقہ ہے یہی جمہوریت کی پہچان۔۔۔۔۔۔!!!۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here